FeaturedNewsPakistanاردو

خونخوار نظام کے ہاتھوں ڈوبا پاکستان

ماحولیاتی آلودگی کے سبب حالیہ سیلاب نے پاکستان کو شدید متاثر کیا بلوچستان سندھ کے پی کے اور وسیب ڈوب گئے کروڑوں لوگ بے گھر ہوئے لاکھوں زخمی اور ہزاروں پانی میں ڈوب کر مر گئے مگر ہمارے میڈیا اور بیورکریسی نے سیلاب کی تباہ کاریوں کو بھر پور چھپانے کی کوشش کی لوگ پانی میں ڈوب کر مرتے رہے مگر کیمرہ کا آنکھ اندھا ہی رہا.

بیوروکریسی تباہیوں کو اس لیے رپورٹ نہیں کر رہا تھا کہ پورا نظام مکمل طور پر درھم برہم ہو کر ناکام ہوا تھا ریاست کی مددکمک کہیں پہنچ نہیں پا رہا تھا تمام رابطہ سڑکیں پانی میں بہہ گئے تھے ان چالیس دنوں میں مسلسل بارش کے دوران نوح کا کشتی کہیں نظر نہیں آیا ریاست ریسکیو کرنے میں مکمل ناکام رہا ہر طرف پانی ہی پانی تھا لوگوں کے سب جمع پونجی مال مڈی اور جمع شدہ خوراک پانی میں بہہ گئے والدین بچوں کو بھوک پیاس وبائی امرض میں اپنے گود میں دم تھوڑتے دیکھ کر دعائیں دیتے رہے انسان اتنے مجبور تھے کہ وہ ان حالات میں رو نہ سکے بلوچستان کے کالے میدان اور سنگلاخ پہاڑ سندھ اور وسیب کے میدان پہلی بار تاریخ کے بدترین بارش کے پانی کو اپنے سینے پر سہتے رہے بارش اور سیلاب نے جو تباہی مچائی اس کا ذمہ دار عالمی ماحولیات کو خراب کرنے والے ممالک ہیں مگر انکا سزا ہمیں بھگتنا پڑ رہا ہے پہلے ہی ہم بدترین معاشی کراہسس سے گزر رہے ہیں حالیہ سیلاب نے معیشت کو برباد کر کے رکھ دیا ہے سیلاب کے بعد کی صورتحال انتہائی دردناک ہے سیلاب متاثرین کو خوراک کی شدید قلت ہے خیمے نہ ہونے کی وجہ سے لاکھوں لوگ کھلے آسمان تلے آسمان کی سختیاں برداشت کر رہے ہیں مختلف وبائی امراض میں مبتلا ہو کر زندگی اور موت کی ایک اور جنگ لڑنے ہر مجبور ہیں مخیر حضرات عالمی امدادی ادارے صرف فوٹو سیشن تک محدود ہیں جھل مگسی بیلہ موسیٰ خیل صحبت پور واشک نوشکی قلعہ سیف اللہ کوہلو سمیت بلوچستان کے تمام متاثرہ اضلاع میں ابھی تک بحالی کا کام شروع نہیں ہو سکا ہے کئی لوگوں کی اموات وبائی امراض کی وجہ سے ہو رہی ہیں ملریا ڈائریا کے وباء سے لاکھوں لوگ متاثر ہو رہے ہیں زندگی بچانے والے ادویات ناپید ہو چکے ہیں جس کا ذمہ دار ریاست اور عالمی دنیا ہے ایک اندازے کے مطابق پاکستانی معیشت کو 30 ارب ڈالر کا نقصان پہنچا ہے مگر معاشی ماہرین کا کہنا ہے پاکستانی معیشت کو ایک سو ارب ڈالر سے زیادہ نقصانات کا سامنا کر پڑا ہے اس مشکل کے گھڑی میں عالمی دنیا کو جس طرح آگے بڑھ کر پاکستان کی مدد کرنا چاہیے تھا.

اس طرح کسی نے مدد نہیں کیا پاکستان کو عالمی ماحولیات میں بگاڑ پیدا کرنے والے ممالک کے خلاف عالمی عدالت میں ہرجانے کا کیس کرنا چاہیے تاکہ کسی کے کیے کا سزا کسی دوسرے کو بھگتنا نہیں پڑے وزیر خارجہ پاکستان نے عالمی دنیا سے پاکستان کی تمام عالمی قرضوں کے معافی کا مطالبے کے ساتھ مزید امداد کا درخواست کیا ہے اب اقوام عالم کو فراخدلی سے پاکستان کا نہ صرف قرضہ معاف کرے بلکہ سیلاب متاثرین کے بحالی کے لیے مزید امداد فراہم کرے کیونکہ پاکستان عالمی دنیا کو ہر مشکل میں بھر پور سپورٹ کرتا رہا ہے دہشتگردی کی جنگ میں پاکستان نے عالمی دنیا کا ساتھ دے کر اربوں ڈالر کا نقصان اٹھایا ایک لاکھ کے لگ بھگ ہمارے شہری شہید ہوئے.

آج پاکستان تاریخ کے بدترین آفت کا شکار ہیں کروڑوں انسانوں کے جانوں کو خطرہ لاحق ہے جو خطرات کا سامنا آج پاکستانی عوام کر رہے ہیں یہ عالمی دنیا کے پیداہ کردہ مصیبتیں ہیں جن کا خمیازہ پاکستانی عوام بھگت رہی ہے اب عالمی دنیا مدد کرنے کے بجائے این جی اوز کے ذریعے مصیبت ذدہ انسانوں کے دکھوں کا کاروبار شروع کرنے جا رہا ہے عالمی سرمایہ دارانہ نظام اب خونخور بھیڑیا بن گیا ہے جنگوں سیلابوں اور زلزلوں کی تباہی بربادی سے ان کا بقا ہے وگرنہ یہ خونی نظام کب کا زمین بوس ہو چکا ہوتا انسانیت کا معراج سوشل ازم ہے اب ان سیلاب زلزلے اور بمبوں کے زخموں نے طبقاتی جنگ کو شدت سے تیزی کے طرف دھکیل دیا ہے آنے والے دھائیوں میں سرمایہ داری زمین بوس ہونے کی طرف جارہا ہے ایسے میں عالمی مزدور تحریک کو منظم کرنے میں لیفٹیسٹ تنظیموں کو اہم کردار ادا کرنا ہو گا پاکستان میں پیپلز پارٹی کو اپنے بنیادی منشور کے طرف لوٹنا پڑیگا اب مزید مصالحتیں پارٹی کی وجود کے لیے خطرہ بن چکے ہیں بلاول بھٹو کو ذوالفقار علی بھٹو کے روٹی کپڑا اور مکان کے نعرہ کو عملی جامعہ پہنانا ہو گا پھر پاکستان میں سرمایہ انسانیت کے بقاء اور آسائشوں کے لیے استعمال میں لایا جا سکتا ہے پھر سیلابوں زلزلوں کا جدید سائنسی آلات کے ساتھ مقابلہ کیا جا سکے گا۔

پاکستان کے حکومت عالمی غلامی کے بجائے عالمی دنیا کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر تمام عالمی قرضوں کو معاف کرنے اور سیلاب متاثرین کی بحالی کا مطالبہ دہرائے اگر عالمی مدد پاکستانیوں کا مطالبے کو نظر انداز کرے تب عالمی عدالت انصاف میں ان تمام ممالک کے خلاف ہرجانے کا مقدمہ کرے تمام مالیاتی اداروں کے قرضوں کو قومیائے جائیں تاکہ دنیا بھر کے انسانوں کو ایسے بے موت مارنے کا سبب بننے والے ممالک کو ماحولیات کو مزید بگاڑنے سے بچایا جا سکے پاکستان میں سردیوں کا سیزن شروع ہو چکا ہے سیلاب متاثرین بے سروسامانی کے عالم میں کھلے آسمان تلے بےیارومددگا کسی مسیع کے انتظار میں زندگی اور موت کی جنگ لڑ رہے ہیں حکومت کو متاثرین کی بحالی کے لیے دنیا سے اپیل کرنے کے بجائے دباو ڈالنا چائیے جو عذاب ہم پر مسلط ہوا ہے وہ عالمی سرمایہ داری کے عذاب ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button